Thursday, 21st June 2018

Balochi Academy

Home Site Map Feedback Contact us

urdu-logo


بلوچی اکیڈمی ءِ نیمگ ءَ چہ شعبہ بلوچستان جامعہ بلوچستان ءِ وش اتکی مراگش

3ستمبر 2016ءَ بلوچی اکیڈمی ءِ نیمگ ءَ شعبہ بلوچی ءِ سال اول ءُ دومی سال ءِ نودربرانی وش اتک ءَ یک مراگش ئے بندوبوج کنگ بوت۔اے دیوان ءِ جار چین بلوچی اکیڈمی ءِ جنرل سیکریٹری واجہ شکور زاہد اَت۔وھدیکہ اسٹیج ءِ سرا اکیڈمی ءِ کماش ممتازیوسف،نائب کماش واجہ سنگت رفیق،شعبہ بلوچی ءِ استاد بانک نسرین گل،پناہ بلوچ ہم نندوک اتنت۔
درستاں چہ پیش جارچین ءِ نیمگ ءَ واجہ پناہ بلوچ ءَ را توار پرجنگ بوت،کہ آ بئیت وتی تران ءَ بکنت۔واجہ ءَ گشت کہ شعبہ بلوچی ءُ بلوچی اکیڈمی ءِ نزیکیں سیادی ئے است ،بلوچی اکیڈمی ءَ کہ انوگیں دورءَ ہرچ کار ئے کرتگ یا کنگ ءَ انت ،شعبہ بلوچی ءِ اُستادءُ نودربرانی کمک آئی ءَ گون انت۔
بلوچی اکیڈمی کہ داں انوگ ءَ چارصدکتاب ءَ گیش چھاپ ءُ شنگ کرتگ نوں اے کاراں دیما برگ ءِ بار واجہ ءَ نودربرانی بڑءَ داتءُ آئی ءَ دزبندی کرتگ کہ شما نوں وتی پٹ ءُ پول ءَ برجا بہ داریت،بلوچی اکیڈمی شمئے کمکار انت۔
واجہ پناہ بلوچ ءَ رند جارچین ءَ شعبہ بلوچی ءِ دومی سال ءِ نودربر عظیم بلوچءَ گوانک جت عظیم بلوچ ءَ اکیڈمی ءِ پاگواجہ ءُ کارئندہانی منت گران ءَ آئی ءَ ادارگ آنی سرا چمشانکے دور دات کہ ءُ آھانی ارزشت ءِ سرا تران کرت۔آئی ءَ رند بلوچی اکیڈمی ءِ ساڑا کنان ءَ گشت کہ انوگیں دور ءَ پہ بلوچی زبان ءُ لبزانک ءِ دیمروئی ءَ بلوچی اکیڈمی ءِ کرد چہ درائیں ادارگاں دیما انت۔آئی امیت درشان کرت کہ اکیڈمی ہمے رنگ ءَ وتی کرد گیش محکم کنت۔بلوچی اکیڈمی ءِ نودربرانی کمک کنگ ءِ سرا آئی ءَ اکیڈمی ءِ کارئندہ آنی منت گپت۔عظیم بلوچ ءَ رند شعبہ بلوچی ءِ نودربر نسیم بلوچ ءَ را توار جنگ بوت،آئی ءَ اکیڈمی ءِ کارئندہءُ شعبہ بلوچی ءِ اُستادانی منت گپت ءُ گشت کہ اکیڈمی پہ نودربراں مدام یک اوست ئے رنگ ءَ برجم انت۔آئی ءَ گشت کہ اکیڈمی ایوکا چارصد کتابانی چھاپ ءُ شنگ کنگ ءِ نام نہ اِنت۔بلکیں آراج ءِ پجار انت۔ءُ راج ءُ زبان ءِ مڈیانی نام انت بلکیں راج ءُ زبان ءِ زندگ دارگ ءِ فرض آئی ءِ کوپگان انت۔آئی ءَ وتی تران ءِ گڈ سرا اکیڈمی ءِ کماش ءَ چہ دزبندی کت کہ ا ے رنگیں مراگش مدام برجم دارگ بہ بنت۔چہ آئی ءَ رند جارچین ءَ اکیڈمی ءِ نائب کماش سنگت رفیق ءَ را گوانک جت آئی ءَ وتی تران ءِ بندات گوں وتییک شئرے ءَ کت ۔آئی ءَ گشت کہ اکیڈمی ءُ شعبہ بلوچی ءِ کارءُ کرداں چُشیں تپاوتے نیست۔بلوچ راجدپتر ءَ پہازگ ءِ نام بلوچی اکیڈمی انت۔اگاں کسے لبزانک ءِ کجام تک ئے ءَ کارکنگ لوٹیت،بلوچی اکیڈمی ءِ دروازگ پہ آئی ءَ پچ انت۔شعبہ بلوچی ءِ نودربراں کہ ہمک سال یک مراگش ئے دئیگ بیت۔من سدکاں اے مراگش پہ نودربراں یک جزم ئے بیت۔آئی ءَ گشت کہ انوگیں کابینہ ءَ اے شور ٹہینتگ کہ نودربرانی پٹ ءُ پولاں کتابی دروشم دنت ءُ آھاں مالی کمک ہم کنت۔ءُ اے بابت ءَ گوں یونیورسٹیانی کماشاں منگ نامہ بوتگ۔آئی ءَ گشت کہ اکیڈمی ایوکا باسک آنی نہ انت ۔بلکیں ہرزبان ءُ لبزانک دوستانی انت۔اے رندءَ آئی ءَ اے شور ہم ٹہنتگ کہ آبلوچی ءُ بلوچستان ءِ درائیں ادارگاں کمک کنت۔آئی ءَ وتی تران ءِ گڈسراکماش ءِ نیمگ ءَ چہ اکیڈمی ءِ نیمگ ءَ جمکتگیں درائیں ربیدگی مڈی آں شعبہ بلوچی ءَ بخشائگ بوت۔سنگت رفیق ءَ چہ رند گل خان نصیر چیئرءِ سروک بانک نصرین گل ءَ را توار پرجنگ بوت،آئی ءَ درستاں پیش نوکیں کابینہ ءَ را مرادبادی دات ءُ چہ آھاں جوانیں کارکنگ ءِ امیت درشان کرت ءُ بلوچی اکیڈمی ءِ کتابانیارزشت ءِ سرا گپ جت۔آئی ءَ رند دیوان ءِ پاگواجہ ءُ اکیڈمی ءِ کماش ممتاز یوسف ءَ ر اتوار پرجنگ بوت آئی ءَ وت تران ءَ را گونڈ گران ءَ گشت کہ اکیڈمی شعبہ بلوچی ءِ نودربراں ءُ ایندگہ لبزانت ہرچ وھد ءَ کمک کنت ءُ آھانی کتگیں کاراں کتابی دروشم دنت۔چہ ایشی ءَ رند جار چین ءَ دیوان ءِ جارجت۔مراگش ءَ رند شعبہ بلوچی ءِ استاد نسرین گل ءُ نودربراں کتابانی ٹیکی دئیگ بوت۔

کوئٹہ: بلوچی اکیڈمی نے اکیڈمی کی طرف سے چھاپے گئے کیلنڈر سے لاتعلقی کا اعلان کردیا

بلوچی اکیڈمی نے جنرل باڈی کے 57 ویں اجلاس میں اکیڈمی کی طرف سے چھاپے گئے کیلنڈر سے لاتعلقی کا اعلان کردیا ہے۔
اجلاس میں ممبران کی طرف سے یہ اعتراض اٹھایا گیا کہ کیلنڈر میں استعمال کیے گئے سال، مہینے اور دنوں کے نام بلوچ اور بلوچی سے تعلق نہیں رکھتے۔
ان میں سے بعض دنوں، مہینوں اور سالوں کے نام بغیر کسی تحقیق کے کیلنڈر میں شامل کیےگئے ہیں لہٰذا بلوچی اکیڈمی اس کیلنڈر کو own نہیں کرتی اور نہ ہی آئندہ کیلنڈر ان ناموں کے ساتھ شائع کیا جائے گا۔
ممبران کی رائے کے مطابق بلوچی اکیڈمی کو ایک ذمہ دار ادارے کی حیثیت سے غلط روایات کو رائج کرنے سے پرہیز کرنا چاہیے اور تحقیق اور جانچ پڑتال کے بعد ہی اس طرح کی چیزیں شائع کی جانی چاہییں.

بلوچی اکیڈمی کا چیئرمین ممتاز یوسف کی زیر صدارت 57واں جنرل باڈی اجلاس نیوز ڈیسک

بلوچی اکیڈمی کوئٹہ کا 57 واں مجلس عاملہ کا اجلاس مورخہ 6 اگست2017 کو اکیڈمی کمپلیکس کوئٹہ میں منعقد ہوا. اجلاس کی صدارت چیئرمین ممتاز یوسف نے کی. جنرل سیکرٹری شکور زاہد نے سالانہ کارکردگی رپورٹ پیش کی۔ جس میں انہوں نے گزشتہ سال کے دوران منعقد کیےگئے ادبی سرگرمیوں اور تقریبات، نشر واشاعت، مالی اخراجات ودیگر منصوبوں کے متعلق آگہی دی۔ جن میں انسائیکلوپیڈیا پروجیکٹ، بلوچی انگلش ڈکشنری، بلوچی زبان کو پہلی جماعت سے لے کر دسویں جماعت تک نصاب میں پڑھانے، سالانہ ریسرچ جرنل، ایم فل و پی ایچ ڈی اسکالرشپ، بلوچی اِملا ، اصطلاحات ودیگر اقدامات اور مختلف ادبی سرگرمیاں ںشامل تھیں۔

گزشتہ سالوں کے دوران بلوچی اکیڈمی کی طرف سے چھاپے گئے سالانہ کیلنڈر کے بارے میں متفقہ فیصلہ کیا گیا کہ چونکہ کیلنڈر میں استعمال کیے گئے مہینے اور دنوں کے نام بلوچ اور بلوچی سے تعلق نہیں رکھتے لہٰذا اکیڈمی اس کیلنڈر سے دست برداری کا اعلان کرتی ہے اور آئندہ اس کیلنڈر کوچھاپنے سے پرہیز کیا جائے گا تاوقتیکہ بلوچی سال، مہینے اور دنوں کے نام متفقہ طور پر سامنے نہیں آئیں گے۔

اجلاس میں گزشتہ کارکردگی کا جائزہ لیتے ہوئے بلوچی زبان ‘ ادب اورثقافت کے فروغ کے لیے مزید جوش وجذبے کے ساتھ اقدامات اٹھانے کے لیے تجاویز پیش کی گئیں۔

بلوچی اکیڈمی کے اجلاس میں درج ذیل قراردادیں متفقہ طور پر منظور کی گئیں:

قرارداد 1 کے مطابق یہ افسوسناک امر ہے کہ اکادمی ادبیات پاکستان، ادارہ فروغ قومی زبان( مقتدرہ قومی زبان)، نیشنل بک فائونڈیشن، لوک ورثہ، نیشنل کونسل آف آرٹس ودیگر وفاقی ادبی وثقافتی اداروں کے سربراہان کے نامزدگی میں ہر وقت ایک صوبہ، علاقہ یا زبان کے ادیبوں، دانشوروں، محققین کو ترجیح دی جاتی ہے جس کی وجہ سے دیگر صوبوں اور دیگر پاکستانی زبانوں کے دانشوروں کی حق تلفی ہو جاتی ہے اور انہیں شویش میں مبتلا کیاجاتا ہے۔ مجلس عمومی کا یہ اجلاس مطالبہ کرتا ہے کہ اکادمی ادبیات پاکستان، ادارہ فروغ قومی زبان( مقتدرہ قومی زبان)، نیشنل بک فائونڈیشن، لوک ورثہ، نیشنل کونسل آف آرٹس ودیگر ادبی وثقافتی اداروں کے سربراہان کے عہدے پر تمام صوبوں اور زبانوں کو مساوی مواقع فراہم کیے جائیں۔2: اس قرارداد کے مطابق بلوچی اکیڈمی کا یہ اجلاس بلوچستان میں آثار قدیمہ، تاریخی نوادرات اور مقامات کے تحفظ کو یقینی نہ بنانے افسوس کا اظہار کرتے ہوئے اسے اداروں کی غیرسنجیدگی قرار دیتے ہوئے صوبائی اور مرکزی حکومت سے ان تاریخی آثار اور نوادرات کے تحفظ کا مطالبہ کیا گیا۔ اسی طرح بلوچستان میوزیم کو دوبارہ فعال بنایا جائے۔بلوچستان بھر میں موجود آثارقدیمہ کے تحفظ ، فروغ اور محفوظ کرنے کے لیے اقدامات اٹھائے. اس کے علاوہ مہرگڑھ کے مقام پر بین الاقوامی معیار کا میوزیم اور تحقیقی مرکز قائم کیا جائے۔3: قرار داد 3 کے مطابق بلوچی اکیڈمی کا یہ اجلاس حکومت سے مطالبہ کرتا ہے کہ اسکولوں اور تعلیمی اداروں کے موجودہ نصاب کو تبدیل کرے اور نئے نصاب میں بلوچوں کے تاریخ، زبان اور ثقافت کو نمایاں طور پر شامل کر کے نئی نسل کو حقیقی معلومات فراہم کرے ۔ بلوچی اکیڈمی کا یہ اجلاس یہ مطالبہ بھی کرتی ہے کہ بلوچستان ٹیکسٹ بک بورڈ پہلی جماعت سے لے کر دسویں تک بلوچی زبان میں نصاب تشکیل دے اور اس کی تیاری میں بلوچی اکیڈمی کو بھی نمائندگی دی جائے۔4: اس قرار داد کے مطابق بلوچی اکیڈمی کا یہ اِجلاس وزارت اطلاعات ونشریات حکومت پاکستان سے مطالبہ کرتا ہے کہ الیکٹرانک میڈیا میں بلوچی زبان کے پروگراموں کو زیادہ نمائندگی دی جائے اور پروگراموں کا معیار بہتر بنایا جائے۔ خصوصی طور پر پی ٹی وی بولان میں بلوچی زبان کو دوبارہ پرائم ٹائم دیا جائے۔ پی ٹی وی نیشنل پر دیگر زبانوں کی طرح بلوچی اور براہوئی زبانوں کے پروگرام بھی شروع کیے جائیں اور پی ٹی وی بولان کو ایسے بلوچ پرڈیوسرز کے ماتحت کیا جائے جو بلوچی زبان، بلوچ ثقافت اور تاریخ سے آشنا ہوں. نیز پاکستان کے دوسرے صوبوں میں بلوچوں کے لیے بلوچی پروگرام نشر کیے جائیں. ریڈیو پاکستان کوئٹہ اور پاکستان ٹیلی ویژن کوئٹہ میں بلوچ فنکاروں کے مختلف پروگراموں کو پیش کرتے وقت، بلوچی زبان و ادب ، بلوچ ثقافت اور پروگرامز کے لیے معیار پرخصوصی توجہ دی جائے. ریڈیو پاکستان سبی سے وسیع ٹرانسمیٹر کے ذریعے فوری نشریات کا آغاز کیا جائے اور ریڈیو پاکستان کوئٹہ کے خراب ٹرانسمیٹر کو فوری طور پر مرمت کر کے ان کے نشریات کو بلوچ علاقوں تک پہنچایا جائے. نیز F M-101 میں بلوچی کے پروگرام فوری طور پر شروع کیے جائیں۔بلوچی اکیڈمی کا یہ اجلاس وزارت اطلاعات اسلام آباد، پیمرا اور پاکستان ٹیلی ویژن اسلام آباد اور کوئٹہ کے حکام سے مطالبہ کرتا ہے کہ وہ وفاقی دارالحکومت اسلام آباد اور مُلک کے دوسرے علاقوں میں کیبل آپریٹرز کو پابند بنائے کہ وہ پی ٹی وی بولان ودیگر بلوچی چینل کے پروگرامز کو اپنے نشریات میں شامل کرلیں۔

عطا شاد ءِ کلیات چاپ ءُ شنگ بوتگ

کوئٹہ : بلوچی اکیڈمی ءِ نیمگا نامداریں شاعر عطاشاد ءِ شعرانی دپتر (کلیات) چاپ ءُ شنگ کنگ بوتگ۔ اے کلیات ءِ تہا عطاشاد ءِ کتاب ’’ شپ سہار اندیم ‘‘ ءُ ’’روچ گر ‘‘ ءَ ابید چاپ نہ بوتگیں شعر ہم ہوار کنگ بوتگ انت۔ اے کلیات چہ گل خان نصیر ءِ کلیات ’’تیر گال کاریت‘‘ ءَ پد دومی شعرانی کلیات انت کہ اکیڈمی ءِ نیما چہ دیما اتکگ۔ اے کلیات ءِ رد ءُ بند ڈاکٹر صبور بلوچ ءُ ڈاکٹر فضل الخالق ءَ داتگ۔

ڈاکٹر فضل خالق ءِ کتاب ’’ہفت تلار‘‘ ءِ دیم درائی

تربت: تربت یونیورسٹی ءَ یک مزنیں مراگش ءِ اڑ دیم دئیگ بوتگ۔ اے مراگش ءِ تہا ڈاکٹر فضل خالق ءِ نوک چاپ بوتگیں کتاب ’’ ہفت تلار‘‘ ءِ دیم درائی بوتگ۔ کتاب ءِ باروا مہلب بلوچ ، صادق سباہ ، غفور شاد ءُ ڈاکٹر صبور بلوچ ءَ چمشانک داتگ۔ اے مراگش ءِ پاگ واجہی تربت یونیورسٹی ءِ پرووائس چانسلر ڈاکٹر صبور بلوچ ءَ کتگ۔

News & Updates



  

Newsletter Subscriber

Name:
Email:

Contact Info

Address: Adalat Road, Quetta, Pakistan

Phone No:  +92-81-2829566
Email: This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.