Tuesday, 18th June 2019

Balochi Academy

Home Site Map Feedback Contact us

urdu-logo


بلوچی اکیڈمی ءِ پنجاہءُ ہشتمی دیوان

کوئٹہ ( پ ر) بلوچی اکیڈمی ءِ پنجاہءُ ہشتمی دیوان چیئرمین ممتاز یوسف ءِ پاگواجہی ءَ ماں5اگست 2018ءَ جم دارگ بُوت۔دیوان ءَ کارگشاد شکور زاہد ءَ سالینہ کارکردگی رپورٹ پیش کت۔ رپورٹ ءَ نوکیں کتابانی چاپ ءُ شنگ، ادبی مراگش، مالی ہرچ ءُ درچ ، انسائیکلو پیڈیا پروجیکٹ ءِ سرا زُرتگیں گامگیج، بلوچی انگلش ڈکشنری ءِ سرا کار کنگ، بلوچی بنگیجی ءَ بہ گر تاں دہمی جماعت ءَ کورس ءِ اڑ کنگ، ایم فل ءُ پی ایچ ڈی سکالرشپس، بلوچی املا ءُ ایندگہ کار ءُ کردانی باروا زرتگیں گامگیجانی باروا دیوان ءَ را سرپدی دئیگ بوت۔ دیوان ءَ اے قرار داد وانگ بوتگ۔


قرارداد 1۔ بژنی حبرے کہ اکادمی ادیبات پاکستان، نیشنل لینگویج پروموشن ڈیپارٹمنٹ (ادارہ ِ فروغ قومی زبان)، نیشنل بک فائونڈیشن و دگہ وفاقی لبزانکی ادرہانی سروک مدام چہ یکّ صوبہ، دمگ ءُ زبان ءَ تعلقداریں لبزانکار ، پٹ ءُ پولکار ءُ زانت کاران ءَ نامینگ بنت کہ آئی ءِ سوب ءَ کسانیں صوبہ ءُ پاکستان ءِ دگہ زبانانی لبزانکارانی تہا تکانسری ودی بُوئگ ءَ انت، چہ بلوچستان ءَ نامینگ نہ بُوئگ ءَ انت۔ اے لوٹ کنت کہ اے ادارہانی سروک نامینگ ءِ وہد ءَ دراہیں صوبہ ءُ زبانان ءَ بروبریں موہ دئیگ بہ بنت۔


قرارداد 2۔ بلوچی اکیڈمی ءِ اے دیوان بلوچستان ءَ آچار قدیمہ ءِ دمب ءُ راجی مڈّی ءُ نشانانی چہ سرکار ءِ نیمگ ءَ نہ پہازگ ءَ ایر جنت ءُ لوٹ کنت کہ بنجاہی ءُ صوبائی سرکار اے راجی مڈی آنی پہازگ ءِ بند ءُ بست بہ کنت۔ ہمے وڑ ءَ بلوچستان میوزیم ءَ را دوار بنا بہ کنت۔ ماں مہر گڑھ ءَ میاں استمانی بستار ءَ میوزیم ءُ ریسرچ سینٹرے جوڑ کنگ بہ بیت۔


قرار 3۔ بلوچی اکیڈمی ءِ دیوان چہ سرکار ءَ لوٹ کنت کہ آ سکول ءُ وانگ جاہاں استیں نصاب ءَ مٹّ بہ کنت ءُ نوکیں نصاب ءِ تہا بلوچانی راجدپتر ، زبان ءُ دودمان(ثقافت) ءِ جوانی ءَ شون بہ دنت۔ بلوچی اکیڈمی ءِ دیوان اے لوٹ ءَ ہم کنت کہ بلوچستان ٹیکسٹ بک بورڈنصاب ءِ ٹاہینگ ءَ بلوچی اکیڈمی ءَ را نمائندگی بہ دنت۔


قرارداد 4۔ اکیڈمی چہ سرکار ءَ لوٹ کنت کہ اسکول ءُ کالجاں بلوچی وانینگ بہ بیت ءُ بلوچستان ءِ سرکار پہ بلوچی ءِ وانینگ ءَ ہما ورناہاں بہ داریت کہ آہاں چہ یونیورسٹیاں ماسٹرز ءِ ڈگری گپتگ یا ہماہاں بی اے یا بی ایس سی ءَ ونتگ ءُ پاس کتگ۔

بلوچی اکیڈمی کا 58 واں مجلس عاملہ کا ا جلاس زیر صدارت ممتاز یوسف منعقدکیاگیا

کوئٹہ( پ ر )بلوچی اکیڈمی کوئٹہ کا 58 واں مجلس عاملہ کا ا جلاس مورخہ5؍اگست2018ء کو اکیڈمی کمپلیکس کوئٹہ میں منعقد ہوا، اجلاس کی صدارت چیئرمین ممتاز یوسف نے کی،جنرل سیکرٹری شکورزاہد نے سالانہ کارکردگی رپورٹ پیش کیا۔ جس میں انہوں نے گزشتہ سال کے دوران منعقد کئے گئے ادبی سرگرمیوںاورتقریبات، نشر واشاعت ودیگر منصوبوں کے متعلق آگہی دی گئی جبکہ سیکریٹری فنانس پناہ بلوچ سالانہ مالی اخراجات کی رپورٹ کے بارے میں بریفنگ دی ۔ اجلاس میں گزشتہ کارکردگی کا جائزہ لیتے ہوئے بلوچی زبان‘ ادب اورثقافت کے فروغ کے لئے مزید جوش وجذبے کے ساتھ اقدامات اٹھانے کے لئے تجاویز پیش کئے گئے۔بلوچی اکیڈمی کے اجلاس میں درج ذیل قراردادیں متفقہ طور پر منظور کی گئیں،جن میںقرارداد 1۔ یہ افسوسناک امر ہے کہ اکادمی ادبیات پاکستان،ادارہ فروغ قومی زبان( مقتدرہ قومی زبان)، نیشنل بک فائونڈیشن، لوک ورثہ،پاکستان نیشنل کونسل آف آرٹس ودیگر وفاقی ادبی وثقافتی اداروں کے سربراہان کے نامزدگی میں ہر وقت ایک صوبے،علاقے یا زبان کے ادیبوں، دانشوروں، محققین کو ترجیح دیا جاتا ہے، جس کی وجہ سے چھوٹے صوبوں اور دیگر پاکستانی زبانوں کے دانشوروں میں تشویش کی لہر پائی جاتی ہے۔مجلس عمومی کا یہ اجلاس مطالبہ کرتا ہے کہ اکادمی ادبیات پاکستان، مقتدرہ قومی زبان نیشنل بک فائونڈیشن، لوک ورثہ، نیشنل کونسل آف آرٹس ودیگر ادبی وثقافتی اداروں کے سربراہان کے عہدے پر تمام صوبوں اور زبانوں کو برابر مواقع فراہم کیے جائیں۔قرار داد 2 ۔ بلوچی اکیڈمی کا یہ اجلاس بلوچستان میں آثار قدیمہ، تاریخی نوادرات کے اورتاریخی مقامات کے تحفظ کو یقینی نہ بنانے پر غم و غصے کا اظہار کرتے ہوئے صوبائی اور مرکزی حکومت سے ان تاریخی آثار نوادرات کے تحفظ کا مطالبہ کرتی ہے۔ اسی طرح بلوچستان میوزیم کو دوبارہ فعال بنایا جائے۔بلوچستان بھر میں موجود آثارقدیمہ کے تحفظ ،فروغ اور محفوظ کرنے کیلئے اقدامات اٹھائے ،اس کے علاوہ مہرگڑھ کے مقام پر بین الاقوامی معیار کا میوزیم اور تحقیقی مرکز قائم کیا جائے۔قرار داد 3۔ بلوچی اکیڈمی کا یہ اجلاس حکومت سے مطالبہ کرتی ہے کہ اسکولوں اور تعلیمی اداروں کے موجودہ نصاب کو تبدیل کرے اور نئے نصاب میں بلوچوں کے تاریخ، زبان اور ثقافت کونمایاں طریقے شامل کرکے نئی نسل کو حقیقی معلومات فراہم کرے ۔بلوچی اکیڈمی کا یہ اجلاس یہ مطالبہ بھی کرتی ہے کہ بلوچستان ٹیکسٹ بک بورڈ پہلی جماعت سے لے کر دسویں تک بلوچی زبان میںنصاب تشکیل کرے جس کی تیاری میں بلوچی اکیڈمی کوبھی نمائندگی دی جائے۔ قرار داد4۔ یہ اجلاس حکومت سے مطالبہ کرتی ہے کہ بلوچی زبان کو اسکول اور کالج سطح پر پڑھایا جائے اور اس کے لیے بلوچی کے لیکچرار اور استاد تعنیات کیے جائیں۔

بلوچی اکیڈمی کی کابینہ کا ہنگامی جنرل باڈی منعقد کرنے کا اعلان

اکیڈمی کے سالانہ گرانٹ کی کٹوتی کے ردعمل میں28اکتوبر بروز اتوار کولائحہ عمل کا اعلان کیا جائے گا

کوئٹہ (پ ر) بلوچی اکیڈمی کی کابینہ کے اجلاس میں بلوچستان حکومت کی جانب سے سالانہ گرانٹ کی کٹوتی کے خلاف جنرل باڈی کا ایک ہنگامی اجلاس 28اکتوبر کو طلب کرلیا گیا ہے۔ اجلاس میںاکیڈمی کے سالانہ گرانٹ میں کٹوتی اور ان پیسوں کو ایک ڈمی اور کاغذی تنظیم کو دینےکی شدید الفاظ میں مذمت کی گئی۔ ممبران کی طرف سے اس بات پر افسوس کا اظہار کیا گیا کہ بلوچی اکیڈمی کی مرضی اور اطلاع کے بغیر اس کے گرانٹ کی کٹوتی بلوچی زبان کی دشمنی کے مترادف ہے۔ بلوچستان کی موجودہ حکومت اپنے من پسند افراد کو نوازنے کے لیے جتنی رقم کسی کو بھی دے اس پر اکیڈمی کو نہ پہلے اعتراض ہوا ہے اور نہ ہی اب ہوگا لیکن بلوچی اکیڈمی کے گرانٹ سے کسی دوسری ڈمی تنظیم کو نوازنا سراسر زیادتی اور غیر قانونی ہے۔ انہوں نے حکومت سے مطالبہ کیا ہے اس غیر قانونی فیصلے کو واپس لیا جائے۔ اکیڈمی کی فنڈز کی کٹوتی کے خلاف جنرل باڈی کا ہنگامی اجلاس اتوار 28اکتوبر کو طلب کیا گیا ہے جس میںآئندہ کے لائحہ عمل کا فیصلہ کیا جائے گا۔

بلوچی ،براہوئی اور پشتو اکیڈمیوں کے عہدے داران کا اجلاس

کوئٹہ ( پ ر)  مورخہ 23اکتوبر کو بلوچی اکیڈمی کوئٹہ میں ایک اجلاس انعقاد ہوا جس میں بلوچستان میں سرگرم عمل بلوچی ، براہوئی اور پشتو اکیڈمی کے نمائندوں نے شرکت کی۔ اجلاس کے دوران حال ہی میں بلوچی اکیڈمی کے فنڈز میں سے کٹوتی پر بحث و مباحثہ ہوا جس میں اس امر پر تشویش کا اظہار کیا گیا کہ بغیر کسی منطقی جواز کے بلوچی اکیڈمی کے فنڈز سے 25فیصد کاٹ کر ایک ایسے ادارے کو ودیعت کی گئی ہے جس کا کوئی وجود نہیں بلکہ وہ ایک کاغذی ادارہ ہے جس کی رجسٹریشن بھی ابھی حال ہی میں ہوئی ہے۔ اس اجلاس میں تمام مذکورہ اکیڈمیوں کے نمائندوں نے اس امر کا مطالبہ کیا ہے کہ اکیڈمیوں کے بڑھتے ہوئے علمی و ادبی اخراجات کے پیش نظر اور نئے پراجیکٹس کی تکمیل کے لیے نہ صرف موجودہ گرانٹس کو دگنا بڑھائے جائیں بلکہ ان نئے منصوبوں کے لیے مالی وسائل فراہم کیے جائیں تاکہ زبان و ادب کی مزید ترویج کو ممکن بنایا جاسکے۔ تمام ممبران نے حکومت بلوچستان سے مطالبہ کیا کہ جو کٹوتی کا نوٹیفیکیشن وزیراعلیٰ بلوچستان کی طرف سے منظور کیا گیا ہے اسے فی الفور منسوخ کیا جائے تاکہ گذشتہ چھ دہائیوں سے سرگرم عمل بلوچستان کی قدیم اور قدآور ادبی ادارے کو مفلوج کرنے کے بجائے مستحکم کیا جاسکے۔ بلوچی، براہوئی اور پشتو اکیڈمی کے عہدیداران نے اس امر پر تشویش کا اظہار کیا کہ ایک طرف ایسے ادارے موجود ہیں جو قومی زبانوں کی ترقی کے لیے کام کررہے ہیں ان کو حکومت نظر انداز کردیتی ہے لیکن دوسری طرف ڈمی اور کاغذی اداروں کو بغیر کسی کارکردگی کی جانچ و پڑتال اور بنیادی تقاضے پورے کیے بغیر رجسٹریشن کرتی ہے اور اس کے لئے بھاری مقدار میں گرانٹ بھی مقرر کیا جاتاہے جو کہ غیر قانونی عمل ہے اور پھر بلوچی اکیڈمی جیسے بین الاقوامی سطح پر تسلیم ہونے والے ادارے کی منظور شدہ گرانٹ میں سے کٹوتی کرکے ایسے کاغذی اداروں کو نوازنا ہرگزناقابل قبول ہے۔اجلاس کے شرکا نے وزیراعلیٰ بلوچستان سے مطالبہ کیا کہ کٹوتی کی جاری شدہ نوٹیفیکیشن کو فوری طور پر منسوخ کرکے اکیڈمی کے گرانٹ کو بحال کیا جائے۔آخر میں مشترکہ طور پر یہ قرارداد منظور کی گئی کہ بلوچی، پشتو اور براہوئی اکیڈیمیوں کے عہدیداران کییہ مجلس حکومت بلوچستان کی طر ف سے بلوچی اکیڈمی کی سالانہ گرانٹ کے کٹوتی کی شدید الفاظ میں مذمت کرتی ہے اور یہ مطالبہ کرتی ہے کہ بلوچی اکیڈمی کے گرانٹ میں کمی کے احکامات واپس لئے جائیں۔ یہ مجلس مطالبہ کرتی ہے کہ زبان وادب کی ترویج وترقی میںشامل اداروں کی گرانٹ میں کمی کے بجائے اسے بڑھایا جائے کیونکہ ادبی اداروں کو سرکار کی طر ف سے ملنے والی موجودہ مالی گرانٹ دفتری و اشاعتی ضروریات کو پورا کرنے کے لیے ناکافی ہے۔ مزیدیہ مجلس یہ مطالبہ کرتی ہے کہ ایسے تمام ادبی ادارے جوکئی سالوں سے قومی زبان اور ادب کی ترویج میں سرگرم عمل ہیں اوران موضوعات پر کئی کتابیں چھاپ چکی ہیں ،ان کے لیے سالانہ گرانٹ کا اعلان کیا جائے۔ یہ سالانہ گرانٹ پسند و ناپسند کی بنیاد شخصییاکاغذی اداروں کو ملنے کے بجائے اداروں کی کارکردگی اور ادبی کاوشوں کو مدنظر رکھ کر دیاجانا چاہئے۔اس کے علاوہ ادبی اداروں کو فنڈز کے اجراء کے لئے باقاعدہ قواعد وضوابط اور اصول مقررکئے جائیں تاکہ نام نہاد،کاغذی اور ڈمی اداروں کی حوصلہ شکنی ہوسکے۔

بلوچی اکیڈمی کی جنرل باڈی کاممتاز یوسف کے زیر صدارت ہنگامی اجلاس

اکیڈمی کے سالانہ گرانٹ میں کٹوتی کا فیصلہ واپس لیا جائے، ممبران

کوئٹہ (پ ر)  بلوچی اکیڈمی کی جنرل باڈی کا ایک ہنگامی اجلاس چیئرمین ممتاز یوسف کے زیر صدارت منعقد ہوا جس میں سرکار کی جانب سے اکیڈمی کی سالانہ گرانٹ میں کٹوتی کرنے اور اسے ایک کاغذی ادارے ’ بلوچی ادبی اکیڈمی ‘ کو دینے کے خلاف شدید احتجاج کیا گیا۔ اکیڈمی کے ممبران نے مطالبہ کیا کہ بلوچی اکیڈمی کے فنڈز کی کٹوتی بلوچی زبان و ادب کے ساتھ دشمنی کے مترادف ہے۔لہذاوزیراعلیٰ بلوچستان سے اپیل ہے کہ بلوچی اکیڈمی کو گرانٹ کو کم کرنے کے بجائے دگنا کیا جائے تاکہ بلوچی زبان و ادب کی ترویج کے لیے کوششیں تیز تر کی جائیں۔ممبران نے اظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ بلوچستان کی موجودہ حکومت نے بلوچی اکیڈمی کی سالانہ گرانٹ میں 25لاکھ روپے کی کٹوتی کرکے اسے ’بلوچی ادبی اکیڈمی ‘ نامی کاغذی تنظیم کو دینے کا فیصلہ کیا ہے۔ یہ عمل نہ صرف غیر قانونی بلکہ بلوچی زبان و ادب کے دشمنی کے مترادف ہے۔ بلوچی اکیڈمی پچھلے چھ دہائیوں سے بلوچی زبان و ادب کی ترویج میں مصروف عمل ہے۔ اس دوران اکیڈمی نے 480 کتابیں چھاپی ہیں جو کہ بلوچی زبان ، ادب، تاریخ اور ثقافت کے موضوعات پر مشتمل ہیں جو مختلف جامعات اور تعلیمی اداروں کے نصاب کا حصہ ہیں۔ اس کے علاوہ قومی اور بین الاقوامی ادبی تقریبات کا انعقاد کرچکی ہے۔ اس وقت بلوچی انسائیکلوپیڈیا ، بلوچی انگلش ڈکشنری، انگلش بلوچی ڈکشنری اور دوسری زبانوں کے معروف شہہ پاروں کے تراجم سمیت متعدد منصوبوں پر عمل درآمد کررہی ہے۔ لیکن انتہائی افسوس کا مقام ہے کہ اکیڈمی کی سالانہ گرانٹ میں اضافہ کرنے کے بجائے 25 لاکھ کی کٹوتی کرکے، ایک مخصوص شخص کی کاغذی تنظیم بلوچی ادبی اکیڈمی کو دینے کی منظوری دی گئی ہے جو کہ نہ صرف غیر قانونی عمل ہے بلکہ بلوچی اکیڈمی جیسے ادارے کو زک پہنچانے کے مترادف ہے۔اجلاس کے شرکا نے اس بات پر اتفاق کیا کہ بلوچی زبان اور بلوچی اکیڈمی کے خلاف سازشوں میں ملوث افراد کو بے نقاب کیا جائے۔ اجلاس میں قرارداد پیش کیا گیا کہ بلوچی اکیڈمی کی جنرل باڈی کا یہ ہنگامی اجلاس اکیڈمی کے سالانہ گرانٹ میں کٹوتی کے حکم کو ناپسندیدگی کی نگاہ سے دیکھتی ہے۔ اس اقدام کو بلوچی زبان کے فروغ کے راہ میں قدغن لگانے کا عمل گردانتی ہے اور اس ناانصافی پر مبنی فیصلے کو فوری واپس لینے کا مطالبہ کرتی ہے۔ بلوچی اکیڈمی کا یہ اجلاس وزیراعلیٰ بلوچستان سے مطالبہ کرتی ہے کہ بلوچی اکیڈمی کی جانب سے جمع کیے گئے تمام منصوبوں (جن میں انسائیکلوپیڈیا، دوسری زبانوں کے بلوچی میں تراجم اور ڈکشنری وغیرہ شامل ہیں) کو فوری طور پر منظور کرکے ان کے فنڈز جاری کرنے کا حکم صادر فرمائے۔ بلوچی اکیڈمی کا یہ اجلاس حکومت کے متعلقہ اداروں سے مطالبہ کرتی ہے کہ بلوچی اکیڈمی سے ملتے جلتے ناموں کی رجسٹریشن کو منسوخ کرے تاکہ مستقبل میں ’ بلوچی ادبی اکیڈمی ‘ جیسی کاغذی تنظیمیں بلوچی اکیڈمی کے نام کو اپنے مذموم مقاصد کے لیے استعمال نہ کرسکیں۔ عبدالواحد بندیگ کو سختی سے تنبیہ کی جاتی ہے کہ وہ چندے یا اس قسم کی دوسری مراعات حاصل کرنے کے لیے بلوچی اکیڈمی کا نام استعمال کرنے سے گریز کرے وگرنہ اکیڈمی ان کے خلاف قانونی چارہ جوئی کا حق محفوظ رکھتی ہے۔ اکیڈمی کا یہ اجلاس ایگزیکٹو باڈی کو یہ ہدایت کرتی ہے کہ بلوچی اکیڈمی کے آئین کی خلاف ورزی اور اس کے فنڈز کے کٹوتی کی مذموم سازش میں شریک افراد جن میں عبدالواحد بندیگ ، ان کے بیٹے بی بگر بلوچ اور معاون و ساتھی غلام حیدر بادینی کے خلاف آئین کے مطابق انکوائری کرنے اور کاروائی کی ہدایت کرتی ہے۔ اس حوالے سے اگر عبدالواحد بندیگ کے دئور چیئرمینی میں وہ اور ان کے بیٹے بی بگر نے اگر اکیڈمی کے فنڈز میں کسی قسم کی خرد بُرد کی ہے تو ایسے عناصر کے خلاف سخت کاروائی عمل میں لائی جائے تاکہ مستقبل میں اکیڈمی کے فنڈز کا ضیاع نہ ہو اور احتسابی عمل کو ممکن بنایا جاسکے۔ اس کے علاوہ غلام حیدر بادینی جو بلوچی اکیڈمی کے ممبر ہیں وہ ’’ بلوچی ادبی اکیڈمی ‘‘ کی کابینہ کی رجسٹریشن کے لیے انڈسٹری ڈیپارٹمنٹ میں بطور گواہ اور معاون شامل ہیں جو اکیڈمی کے خلاف سرگرم عمل ہیں، کے خلاف بھی کاروائی عمل میں لایا جائے۔بلوچی اکیڈمی کا یہ اجلاس صوبائی حکومت سے مطالبہ کرتی ہے کہ صوبے بھر میں زبان و ادب کے فروغ میں سالہا سال سے سرگرم عمل اداروں کی کارکردگی کو مدنظر رکھتے ہوئے ان کے لیےسالانہ گرانٹ منظور کرکے بلوچستان میں توانا تخلیقی ادب کے فروغ کو ممکن بنائے۔ بلوچی اکیڈمی کا یہ اجلاس مطالبہ کرتی ہے کہ صوبے میں ادبی اداروں کو فنڈز کے اجرا کے لئے باقاعدہ طور پر اصول، ضوابط اور قوانین مرتب کیے جائیں تاکہ پسند و ناپسند کی بنیاد پر نام نہاد، موقع پرست اور کاغذی اداروں کی حوصلہ شکنی ہو اور قومی دولت کے ضیاع کو روکا جاسکے۔

News & Updates



  

Newsletter Subscriber

Name:
Email:

Contact Info

Address: Adalat Road, Quetta, Pakistan

Phone No:  +92-81-2829566
Email: This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.