Friday, 27th November 2020

Balochi Academy

Home Site Map Feedback Contact us

urdu-logo


بلوچستان ءِ اسکول ،کالج ءُ یونیورسٹیاں بلوچی وانینگ بیت بلے پہ وانگ ءُ وانینگ ءَ تنی وہدی شریں ءُ دل سریں نصاب یا کورس جوڑ نہ بوتگ۔حکومت بلوچستان ءِ ٹیکسٹ بک بورڈ پہ بلوچ زہگاںہنچیں نصاب جوڑ کنت کہ آنامعیاری انت ءُ نا زبان ءُ بیان ءَ شر ءُ واناک انت۔ بلوچی بلوچستان ءِ پراہ ءُ شاہیگانیں دمگاں ءُ سندھ ءُ پنجاب ءِ بلوچ دمگاں ءُ ایران ءُ اوگانستان ءِ بلوچ علاقہاں لہجہی کسانیں تفاوت ءُ پرک ئے داریت بلے اے نصابانی جوڑ کنوک چرے حقیقت ءَ پوہ نہ انت۔اے ادارگ پہ نصابءِ جوڑ کنگ ءَ ہنچیں مردماں کار بندانت کہ آبلوچی زبان ءُ لبزانک،بلوچ ءِتاریخ،معاشرت ءُ دود ءُ ربیدگاں ناسہی انت۔ پمیشا نااسکولانی نصاب ءُ ناکالج ءُ یونیورسٹیانی نصاب معیاری انت۔ بلوچی اکیڈمی گوں حکومتی واکداراں دست بندی کنت کہ پہ بلوچی ءِ نصاب ءِ جوڑ کنگ ءَ اکیڈمی ءَ را نمائندگی بہ دنت تاںکہ پہ بلوچ طالباں شریں، معیاری ءُ دل سریںنصاب ئے بے جوڑ کنگ ءَ بلوچی اکیڈمی بلوچستان ٹیکسٹ بک بورڈ ءَ راعلمی مدت دات بہ کنت۔

            بلوچی اکیڈمی اے لوٹ کنت کہ بلوچستان یونیورسٹی کوئٹہ ءُ تربت یونیورسٹی ءِ بلوچی ڈیپارٹمنٹس پہ کالج ءُ یونیورسٹی ءِ بلوچی ءِ وانوکاں جوانیں ءُ دل سریںنصابے جوڑ بکن انت۔ بلوچی اکیڈمی گوں اے دوئیں یونیورسٹیانی وائس چانسلران دست بندی کنت کہ وانندگ ءُ زانندگیں مردمانی کمیٹی ے مقرر بہ کنت تاںکہ آپہ یونیورسٹی ءُ کالجاں بلوچی ءِ شریں نصابے اڈبہ دئینت ءُبلوچی اکیڈمی ءَ اے کمیٹی ءَ نمائندگی دیگ بہ بیت تاںکہ اکیڈمی معیاری نصاب ءِ جوڑ کنگ ءَ یونیورسٹیانی علمی مدت ءَ بہ کنت۔

 


 

 

قرارداد

 

            پاکستان ءِ اکیڈمی ادبیات پاکستان ءِ قومانی زبانانی: بلوچی، پشتو، سندھی، پنجابی ءِ ترقی ءُ دیمروی کاراں گلائیش انت۔ ادبیات اے زباناں کتاب ہم چھاپ کنت۔ اے زبانانی نوشتہ بوتگیں کتاباں دومی ز باناں رجانک کنت۔ ادبیات اے زبانانی ادارہاں مالی مدت ءُ کمک کنت ءُ اے زبانانی شاعر، نوشتہ کار ءُ لبززانتاں ءَ مالی کمک کنت۔ پرے مقصد ءَاکیڈمی ادبیات ءِ یک اسکالرشپ کمیٹی یے است۔ادبیات شاعر ءُ ادیباںایوارڈہم دنت۔ادبیات ءِ بورڈ آف گورنر ے ہم است۔

 

            بلوچی اکیڈمی بلوچی زبان ءُ لبزانک ءِ قومی ادارہ یے بلے اکیڈمی ادبیات ءِ اسکالرشپ کمیٹی ءَ یا بورڈ آف گورنر ءَ بلوچی اکیڈمی ءِ نمائندگی نیست۔ ادبیات ءِ بورڈ آف گورنر ءَ پہ بلوچستان ءِ نمائندگی ءَ بایدانت چہ بلوچی اکیڈمی ءَجُست گرگ بہ بیت۔ہمے پیم ءَ بلوچی زبان ءُ لبزانک ءِ سرا نوشتہ بوتگیں کتابانی ایوارڈ دیگ ءَ ہم بائد انت کہ بلوچی اکیڈمی جست گرگ بہ بیت۔ اکیڈمی ادبیات ہما مردماں مالی مدت کنگ ءَ انت کہ آہانی جاہ ءَ بائد انت اے کمک حقدارتریں ادیب ءُ شاعر ءُ لبزانتاں دیگ بہ بیت۔پمیشا بائدانت کہ اسکالر شپ کمیٹی ءَ اکیڈمی ءِ نمائندگی بہ بیت۔ چہ ادبیاتءِ نیمگ ءَ پہ بلوچی اکیڈمی ءَ مقرر کتگیں سالانہ گرانٹ سک کم انت۔ اکیڈمی گوں اکیڈمی ادبیات ءِ واکداراں دست بندی کنت کہ آ بلوچی اکیڈمی ءِ سالانہ گرانٹ ءَ بہ ودین انت۔

 


 

 

بلوچی اکیڈمی ءَ پہ بلوچی نبشتہ کاریءَ رومن ءُعربی سیاہگ ءِرضا ءُ لبزانکی گامگیجانی منظوری

 

جنرل باڈی ءَچہ عبدالواحد بندیگ اکیڈمی ءِ پُلیتگیںزَرّانی پچ گرگ ءَ کڈن کنگ بوت

 

گچین کاری ءَپروفیسرسنگت رفیق کماش گچین ،سوگندءِمراگش ءَانتظامی مجلس ءِباسکانی سوگند

 

کوئٹہ(پ ر)

 

بلوچی اکیڈمی ءِسالینی دیوان ءَانتظامی مجلس ءَراکڈن کنگ بوتگ کہ عبدالواحدبندیگ ءَ ہمازَرّکہ چہ اکیڈمی ءَپُلیتگ انت آہانی واترگرگ ءَقانودی ءُربیتی کاروائی کنگ بہ بیت۔ جنرل باڈی ءَگوٛشگ بوت بلوچستان یونیورسٹی ءِاسسٹنٹ پروفیسرحامدعلی بلوچ ءَلیپ ٹاپ واترکتگ بلئے اکیڈمی ءِ زرّ واترنہ کتگ انت۔باسکاںگوٛشگ بوتگ کہ انتظامی مجلس کاروائی بہ کنت ۔ جنرل باڈی ءَرا بلوچی رسم الخط عربک ءُ رومن خطے باروا ڈاکٹر نصیردشتی ءِ دیم داتگیں سرءُسوجانی بارواباسکاناں بریف کنگ بوت ۔اکیڈمی ءِباسکاںاے سیاہگ ساڑات ءُایشانی رواج دیگ ءِمنظوری دات ۔ اے بارواباسکاںڈاکٹرنصیردشتی ءِحذمت ساڑات انت ۔ بلوچی اکیڈمی ءَپہ معیاری ءُمنّیتگیں سیاہگ ءِرواج دیگ بازیںجہدے کتگ ءُنوںاے آپ سرے ءَسربوتگ ۔ جنرل باڈی ءَگوشگ بوت کہ زہگانی لبزانک ءُوانگ ءُزانگی ہیل کاریءِ واستہ کارٹون ءُویڈیواینی میشن ءِجوڑکنگ، ایدگہ زبانانی کلاسیکل لبزانک ءِماںبلوچی ءَتَرّینگ ءُبلوچی ءِجوانیںساچشت ءُکتاباںماںایدگہ زباناںرجانک کنگ ،بلوچی زبان ءِگالوارانی سرءَپولکاری ،بلوچی زبان ءِلبزبلدانی ویب سائیٹ ءَایرکنگ ، ءُجدیدیںآئی ٹی بہرگ ءِجوڑکنگ ، بلوچی ءَاصطلاح سازی ءِجہت ءَگامگیج زورگ ، جنرل باڈی ءَکڈن کنگ بوت کہ ایم فل ءُپی ایچ ڈی ءِپولکاری نبشتانک ءُمقالہانی باروابلوچستان ءُمُلک ءِیونیورسٹیانی وائس چانسلراںگوںحال ءُاحوال کنگ ءَگُشادکنگ۔بلوچی اکیڈمی ءِشستءُ یکمی ءُشست ءُدومی جنرل باڈی ءِ دیوان نومبرءِاولی تاریخ ءَکوئٹہ ءَاکیڈمی ءِکارگس ماڑی ءَبرجم دارگ بوت ، اولی دیوان ءِپاگواجہ کماش واجہ ممتاذیوسف ات ءُ اے دیوان ءَسالینی رپورٹ دیوان ءَوانگ بوت ، رپورٹ ءَ گوستگیں سالاںدیوان ، مراگش ، کتاب ءُچاپکاری ءُایدگہ گامگیجانی باروا گوشگ بوت انت۔ شنگ کاری کارگشادہیبتان عمرءَچاپ بوتگیںکتابانی رپورٹ ونت ، مالیاتی کارگشادپناہ بلوچ ءَحرچ ءُ درچانی رپورٹ ونت ،جنرل باڈی ءَرااکیڈمی ءَبوتگیںنوکیںمُرمت ءِکارانی سراحرچ ءُدرچانی بارواگوشگ بوت ۔ رپورٹ ءَ اکیڈمی باسکاناںبلوچی اکیڈمی ءِخلاف ءَبوتگیںپندل ءُسازشانی بارواحال دیگ بوت ، شست ءُدومی جنرل باڈی ءِدیوان ءَگچین بوتگیںکابینہ ءَچہ اکیڈمی ءِ کماشیںباسک ءُنامداریںتاریخ زانت واجہ الفت نسیم ءَسوگندزرت ، چریشی ءَپیسرالیکشن کمیشن ءِکماش واجہ ایڈووکیٹ ملک ظہوراحمدشاہوانی ءَگچین کاری ءِ نتیجہ ءِجارجت ،اے رِدءَپروفیسرسنگت رفیق اکیڈمی ءِکماش گچین کنگ بوت ، کابینہ ءِادگہ منصب دارہیبتان عمرنائب کماش، ڈاکٹربیزن سبامزن کارگشاد، ذاکرقادرشنگ کاری کارگشاد ءُ ظاہر جمالدینی مالیاتی کارگشادگچین کنگ بوت انت ءُانتظامی مجلس ءِباسک واجہ ممتازیوسف ، محمدپناہ ، ایڈوکیٹ چنگیزعیسی ءُشکیل بلوچ بید مقابلہ گچین کنگ بوت انت ۔

 


 

 

قرارداد

 

            بلوچی اکیڈمی لوٹ کنت کہ تربت یونیورسٹی ءُ بلوچستان یونیورسٹی کوئٹہ بلوچی ءَ ایم فل ءُ پی ایچ ڈی ءِ طالبان ءَ ہنچیں موضوع ءُ سرحالاں پٹ ءُ پول بہ پرمائیت کہ آ علمی ءُ ادبی معیار ءَ بیا اَنت۔بائد انت کہ سطحی موضوع ایم فل ءُ پی ایچ ڈی ءِ طالبانءَ دیگ مہ بیت۔ لہتیں سال ساری بلوچی اکیڈمی ءَ لہتیں علمی،تاریخی، سیاسی، معاشرتی ءُ لبزانکی موضوع دوئیں  یونیورسٹیانی وائس چانسلر اں ءَ رواں داتگ ءُ گوٛشتگ ات کہ اے ادارہانی بلوچی ڈیپارٹمنٹ ہمے یا ہمے وڑیں موضوع ءُ سرحال پہ ریسرچ ءُ پٹ ءُ پول ءَ طالباں ءَ بہ دیینت۔

 

            بلوچی اکیڈمی گوں اے دوئیں یونیورسٹیانی وائس چانسلراںدست بندی کنت کہ آبلوچی ڈیپارٹمنٹ ءِ واکداراں ہدایت بہ کن انت کہ آ بلوچی ءِ طالباںءَ پہ ایم فل ءُ پی ایچ ڈی ءِ ڈگریانی حاتراپہ پٹ ءُ پول ءَ شریں علمی ءُلبزانکی موضوع بہ دیینت۔

 

بلوچی اکیڈمی ءِ پنجاہءُ ہشتمی دیوان

کوئٹہ ( پ ر) بلوچی اکیڈمی ءِ پنجاہءُ ہشتمی دیوان چیئرمین ممتاز یوسف ءِ پاگواجہی ءَ ماں5اگست 2018ءَ جم دارگ بُوت۔دیوان ءَ کارگشاد شکور زاہد ءَ سالینہ کارکردگی رپورٹ پیش کت۔ رپورٹ ءَ نوکیں کتابانی چاپ ءُ شنگ، ادبی مراگش، مالی ہرچ ءُ درچ ، انسائیکلو پیڈیا پروجیکٹ ءِ سرا زُرتگیں گامگیج، بلوچی انگلش ڈکشنری ءِ سرا کار کنگ، بلوچی بنگیجی ءَ بہ گر تاں دہمی جماعت ءَ کورس ءِ اڑ کنگ، ایم فل ءُ پی ایچ ڈی سکالرشپس، بلوچی املا ءُ ایندگہ کار ءُ کردانی باروا زرتگیں گامگیجانی باروا دیوان ءَ را سرپدی دئیگ بوت۔ دیوان ءَ اے قرار داد وانگ بوتگ۔


قرارداد 1۔ بژنی حبرے کہ اکادمی ادیبات پاکستان، نیشنل لینگویج پروموشن ڈیپارٹمنٹ (ادارہ ِ فروغ قومی زبان)، نیشنل بک فائونڈیشن و دگہ وفاقی لبزانکی ادرہانی سروک مدام چہ یکّ صوبہ، دمگ ءُ زبان ءَ تعلقداریں لبزانکار ، پٹ ءُ پولکار ءُ زانت کاران ءَ نامینگ بنت کہ آئی ءِ سوب ءَ کسانیں صوبہ ءُ پاکستان ءِ دگہ زبانانی لبزانکارانی تہا تکانسری ودی بُوئگ ءَ انت، چہ بلوچستان ءَ نامینگ نہ بُوئگ ءَ انت۔ اے لوٹ کنت کہ اے ادارہانی سروک نامینگ ءِ وہد ءَ دراہیں صوبہ ءُ زبانان ءَ بروبریں موہ دئیگ بہ بنت۔


قرارداد 2۔ بلوچی اکیڈمی ءِ اے دیوان بلوچستان ءَ آچار قدیمہ ءِ دمب ءُ راجی مڈّی ءُ نشانانی چہ سرکار ءِ نیمگ ءَ نہ پہازگ ءَ ایر جنت ءُ لوٹ کنت کہ بنجاہی ءُ صوبائی سرکار اے راجی مڈی آنی پہازگ ءِ بند ءُ بست بہ کنت۔ ہمے وڑ ءَ بلوچستان میوزیم ءَ را دوار بنا بہ کنت۔ ماں مہر گڑھ ءَ میاں استمانی بستار ءَ میوزیم ءُ ریسرچ سینٹرے جوڑ کنگ بہ بیت۔


قرار 3۔ بلوچی اکیڈمی ءِ دیوان چہ سرکار ءَ لوٹ کنت کہ آ سکول ءُ وانگ جاہاں استیں نصاب ءَ مٹّ بہ کنت ءُ نوکیں نصاب ءِ تہا بلوچانی راجدپتر ، زبان ءُ دودمان(ثقافت) ءِ جوانی ءَ شون بہ دنت۔ بلوچی اکیڈمی ءِ دیوان اے لوٹ ءَ ہم کنت کہ بلوچستان ٹیکسٹ بک بورڈنصاب ءِ ٹاہینگ ءَ بلوچی اکیڈمی ءَ را نمائندگی بہ دنت۔


قرارداد 4۔ اکیڈمی چہ سرکار ءَ لوٹ کنت کہ اسکول ءُ کالجاں بلوچی وانینگ بہ بیت ءُ بلوچستان ءِ سرکار پہ بلوچی ءِ وانینگ ءَ ہما ورناہاں بہ داریت کہ آہاں چہ یونیورسٹیاں ماسٹرز ءِ ڈگری گپتگ یا ہماہاں بی اے یا بی ایس سی ءَ ونتگ ءُ پاس کتگ۔

بلوچی اکیڈمی کا 58 واں مجلس عاملہ کا ا جلاس زیر صدارت ممتاز یوسف منعقدکیاگیا

کوئٹہ( پ ر )بلوچی اکیڈمی کوئٹہ کا 58 واں مجلس عاملہ کا ا جلاس مورخہ5؍اگست2018ء کو اکیڈمی کمپلیکس کوئٹہ میں منعقد ہوا، اجلاس کی صدارت چیئرمین ممتاز یوسف نے کی،جنرل سیکرٹری شکورزاہد نے سالانہ کارکردگی رپورٹ پیش کیا۔ جس میں انہوں نے گزشتہ سال کے دوران منعقد کئے گئے ادبی سرگرمیوںاورتقریبات، نشر واشاعت ودیگر منصوبوں کے متعلق آگہی دی گئی جبکہ سیکریٹری فنانس پناہ بلوچ سالانہ مالی اخراجات کی رپورٹ کے بارے میں بریفنگ دی ۔ اجلاس میں گزشتہ کارکردگی کا جائزہ لیتے ہوئے بلوچی زبان‘ ادب اورثقافت کے فروغ کے لئے مزید جوش وجذبے کے ساتھ اقدامات اٹھانے کے لئے تجاویز پیش کئے گئے۔بلوچی اکیڈمی کے اجلاس میں درج ذیل قراردادیں متفقہ طور پر منظور کی گئیں،جن میںقرارداد 1۔ یہ افسوسناک امر ہے کہ اکادمی ادبیات پاکستان،ادارہ فروغ قومی زبان( مقتدرہ قومی زبان)، نیشنل بک فائونڈیشن، لوک ورثہ،پاکستان نیشنل کونسل آف آرٹس ودیگر وفاقی ادبی وثقافتی اداروں کے سربراہان کے نامزدگی میں ہر وقت ایک صوبے،علاقے یا زبان کے ادیبوں، دانشوروں، محققین کو ترجیح دیا جاتا ہے، جس کی وجہ سے چھوٹے صوبوں اور دیگر پاکستانی زبانوں کے دانشوروں میں تشویش کی لہر پائی جاتی ہے۔مجلس عمومی کا یہ اجلاس مطالبہ کرتا ہے کہ اکادمی ادبیات پاکستان، مقتدرہ قومی زبان نیشنل بک فائونڈیشن، لوک ورثہ، نیشنل کونسل آف آرٹس ودیگر ادبی وثقافتی اداروں کے سربراہان کے عہدے پر تمام صوبوں اور زبانوں کو برابر مواقع فراہم کیے جائیں۔قرار داد 2 ۔ بلوچی اکیڈمی کا یہ اجلاس بلوچستان میں آثار قدیمہ، تاریخی نوادرات کے اورتاریخی مقامات کے تحفظ کو یقینی نہ بنانے پر غم و غصے کا اظہار کرتے ہوئے صوبائی اور مرکزی حکومت سے ان تاریخی آثار نوادرات کے تحفظ کا مطالبہ کرتی ہے۔ اسی طرح بلوچستان میوزیم کو دوبارہ فعال بنایا جائے۔بلوچستان بھر میں موجود آثارقدیمہ کے تحفظ ،فروغ اور محفوظ کرنے کیلئے اقدامات اٹھائے ،اس کے علاوہ مہرگڑھ کے مقام پر بین الاقوامی معیار کا میوزیم اور تحقیقی مرکز قائم کیا جائے۔قرار داد 3۔ بلوچی اکیڈمی کا یہ اجلاس حکومت سے مطالبہ کرتی ہے کہ اسکولوں اور تعلیمی اداروں کے موجودہ نصاب کو تبدیل کرے اور نئے نصاب میں بلوچوں کے تاریخ، زبان اور ثقافت کونمایاں طریقے شامل کرکے نئی نسل کو حقیقی معلومات فراہم کرے ۔بلوچی اکیڈمی کا یہ اجلاس یہ مطالبہ بھی کرتی ہے کہ بلوچستان ٹیکسٹ بک بورڈ پہلی جماعت سے لے کر دسویں تک بلوچی زبان میںنصاب تشکیل کرے جس کی تیاری میں بلوچی اکیڈمی کوبھی نمائندگی دی جائے۔ قرار داد4۔ یہ اجلاس حکومت سے مطالبہ کرتی ہے کہ بلوچی زبان کو اسکول اور کالج سطح پر پڑھایا جائے اور اس کے لیے بلوچی کے لیکچرار اور استاد تعنیات کیے جائیں۔

بلوچی اکیڈمی کی کابینہ کا ہنگامی جنرل باڈی منعقد کرنے کا اعلان

اکیڈمی کے سالانہ گرانٹ کی کٹوتی کے ردعمل میں28اکتوبر بروز اتوار کولائحہ عمل کا اعلان کیا جائے گا

کوئٹہ (پ ر) بلوچی اکیڈمی کی کابینہ کے اجلاس میں بلوچستان حکومت کی جانب سے سالانہ گرانٹ کی کٹوتی کے خلاف جنرل باڈی کا ایک ہنگامی اجلاس 28اکتوبر کو طلب کرلیا گیا ہے۔ اجلاس میںاکیڈمی کے سالانہ گرانٹ میں کٹوتی اور ان پیسوں کو ایک ڈمی اور کاغذی تنظیم کو دینےکی شدید الفاظ میں مذمت کی گئی۔ ممبران کی طرف سے اس بات پر افسوس کا اظہار کیا گیا کہ بلوچی اکیڈمی کی مرضی اور اطلاع کے بغیر اس کے گرانٹ کی کٹوتی بلوچی زبان کی دشمنی کے مترادف ہے۔ بلوچستان کی موجودہ حکومت اپنے من پسند افراد کو نوازنے کے لیے جتنی رقم کسی کو بھی دے اس پر اکیڈمی کو نہ پہلے اعتراض ہوا ہے اور نہ ہی اب ہوگا لیکن بلوچی اکیڈمی کے گرانٹ سے کسی دوسری ڈمی تنظیم کو نوازنا سراسر زیادتی اور غیر قانونی ہے۔ انہوں نے حکومت سے مطالبہ کیا ہے اس غیر قانونی فیصلے کو واپس لیا جائے۔ اکیڈمی کی فنڈز کی کٹوتی کے خلاف جنرل باڈی کا ہنگامی اجلاس اتوار 28اکتوبر کو طلب کیا گیا ہے جس میںآئندہ کے لائحہ عمل کا فیصلہ کیا جائے گا۔

بلوچی ،براہوئی اور پشتو اکیڈمیوں کے عہدے داران کا اجلاس

کوئٹہ ( پ ر)  مورخہ 23اکتوبر کو بلوچی اکیڈمی کوئٹہ میں ایک اجلاس انعقاد ہوا جس میں بلوچستان میں سرگرم عمل بلوچی ، براہوئی اور پشتو اکیڈمی کے نمائندوں نے شرکت کی۔ اجلاس کے دوران حال ہی میں بلوچی اکیڈمی کے فنڈز میں سے کٹوتی پر بحث و مباحثہ ہوا جس میں اس امر پر تشویش کا اظہار کیا گیا کہ بغیر کسی منطقی جواز کے بلوچی اکیڈمی کے فنڈز سے 25فیصد کاٹ کر ایک ایسے ادارے کو ودیعت کی گئی ہے جس کا کوئی وجود نہیں بلکہ وہ ایک کاغذی ادارہ ہے جس کی رجسٹریشن بھی ابھی حال ہی میں ہوئی ہے۔ اس اجلاس میں تمام مذکورہ اکیڈمیوں کے نمائندوں نے اس امر کا مطالبہ کیا ہے کہ اکیڈمیوں کے بڑھتے ہوئے علمی و ادبی اخراجات کے پیش نظر اور نئے پراجیکٹس کی تکمیل کے لیے نہ صرف موجودہ گرانٹس کو دگنا بڑھائے جائیں بلکہ ان نئے منصوبوں کے لیے مالی وسائل فراہم کیے جائیں تاکہ زبان و ادب کی مزید ترویج کو ممکن بنایا جاسکے۔ تمام ممبران نے حکومت بلوچستان سے مطالبہ کیا کہ جو کٹوتی کا نوٹیفیکیشن وزیراعلیٰ بلوچستان کی طرف سے منظور کیا گیا ہے اسے فی الفور منسوخ کیا جائے تاکہ گذشتہ چھ دہائیوں سے سرگرم عمل بلوچستان کی قدیم اور قدآور ادبی ادارے کو مفلوج کرنے کے بجائے مستحکم کیا جاسکے۔ بلوچی، براہوئی اور پشتو اکیڈمی کے عہدیداران نے اس امر پر تشویش کا اظہار کیا کہ ایک طرف ایسے ادارے موجود ہیں جو قومی زبانوں کی ترقی کے لیے کام کررہے ہیں ان کو حکومت نظر انداز کردیتی ہے لیکن دوسری طرف ڈمی اور کاغذی اداروں کو بغیر کسی کارکردگی کی جانچ و پڑتال اور بنیادی تقاضے پورے کیے بغیر رجسٹریشن کرتی ہے اور اس کے لئے بھاری مقدار میں گرانٹ بھی مقرر کیا جاتاہے جو کہ غیر قانونی عمل ہے اور پھر بلوچی اکیڈمی جیسے بین الاقوامی سطح پر تسلیم ہونے والے ادارے کی منظور شدہ گرانٹ میں سے کٹوتی کرکے ایسے کاغذی اداروں کو نوازنا ہرگزناقابل قبول ہے۔اجلاس کے شرکا نے وزیراعلیٰ بلوچستان سے مطالبہ کیا کہ کٹوتی کی جاری شدہ نوٹیفیکیشن کو فوری طور پر منسوخ کرکے اکیڈمی کے گرانٹ کو بحال کیا جائے۔آخر میں مشترکہ طور پر یہ قرارداد منظور کی گئی کہ بلوچی، پشتو اور براہوئی اکیڈیمیوں کے عہدیداران کییہ مجلس حکومت بلوچستان کی طر ف سے بلوچی اکیڈمی کی سالانہ گرانٹ کے کٹوتی کی شدید الفاظ میں مذمت کرتی ہے اور یہ مطالبہ کرتی ہے کہ بلوچی اکیڈمی کے گرانٹ میں کمی کے احکامات واپس لئے جائیں۔ یہ مجلس مطالبہ کرتی ہے کہ زبان وادب کی ترویج وترقی میںشامل اداروں کی گرانٹ میں کمی کے بجائے اسے بڑھایا جائے کیونکہ ادبی اداروں کو سرکار کی طر ف سے ملنے والی موجودہ مالی گرانٹ دفتری و اشاعتی ضروریات کو پورا کرنے کے لیے ناکافی ہے۔ مزیدیہ مجلس یہ مطالبہ کرتی ہے کہ ایسے تمام ادبی ادارے جوکئی سالوں سے قومی زبان اور ادب کی ترویج میں سرگرم عمل ہیں اوران موضوعات پر کئی کتابیں چھاپ چکی ہیں ،ان کے لیے سالانہ گرانٹ کا اعلان کیا جائے۔ یہ سالانہ گرانٹ پسند و ناپسند کی بنیاد شخصییاکاغذی اداروں کو ملنے کے بجائے اداروں کی کارکردگی اور ادبی کاوشوں کو مدنظر رکھ کر دیاجانا چاہئے۔اس کے علاوہ ادبی اداروں کو فنڈز کے اجراء کے لئے باقاعدہ قواعد وضوابط اور اصول مقررکئے جائیں تاکہ نام نہاد،کاغذی اور ڈمی اداروں کی حوصلہ شکنی ہوسکے۔

News & Updates



  

Newsletter Subscriber

Name:
Email:

Contact Info

Address: Adalat Road, Quetta, Pakistan

Phone No:  +92-81-2829566
Email: This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.